Jannah Theme License is not validated, Go to the theme options page to validate the license, You need a single license for each domain name.
Hakayat

Hazrat younus ka waqia

Hazrat younus ka waqia

Hazrat younus ka waqia

حضرت یونس علیہ السلام

اشوری دجلہ کی ندیوں کے کنارے بڑے شہروں میں رہتے تھے۔ نینوا ان کے شہروں میں سب سے بڑا تھا۔ یہ ان کے ملک کا دارالحکومت تھا۔ نینوا میں ایک لاکھ سے زیادہ لوگ رہتے تھے۔ وہ زراعت پر گزارہ کرتے تھے۔ انہوں نے اپنے وسیع کھیتوں میں بیج بوئے اور اس زرخیز زمین میں اپنے مویشی چرائے۔ ہمارے نبی حضرت یونس علیہ السلام اسی شہر میں پیدا ہوئے۔ جب وہ بڑا ہوا تو اس نے اپنی قوم کو بتوں کی پوجا کرتے دیکھا۔ اللہ تعالیٰ نے اپنے بندے یونس علیہ السلام کو نبی کے طور پر منتخب کیا۔ یونس اللہ واحد اور غالب پر ایمان رکھتے تھے۔ وہ سمجھ گیا کہ بت محض بیکار پتھر ہیں۔ اللہ تعالیٰ نے یونس کو نینوا کے لوگوں کے پاس بھیجا تاکہ وہ اللہ تعالیٰ کی عبادت کریں اور بتوں کی پوجا سے باز رہیں۔

نینوا کے لوگ

نینوا کے لوگ اچھے تھے لیکن اللہ کے ساتھ شرک کرتے تھے۔ وہ ایک عرصے تک بتوں کی پوجا کرتے رہے۔ ہمارے نبی یونس ان کے پاس آئے۔ اس نے ان کو تبلیغ کی، انہیں نصیحت کی، اور کہا: “صرف اللہ پاک کی بندگی کرو۔ اس کے ساتھ کسی کو شریک نہ کرو۔” نینوا کے لوگ بتوں کی پوجا کے عادی تھے۔ انہوں نے یونس کے پیغام کو قبول کرنے سے انکار کر دیا، اور پھر انہوں نے اس کی مزاحمت کی۔ تمام انبیاء نے لوگوں کو اللہ کی بندگی کرنے کا طریقہ سکھایا جو واحد اور واحد ہے۔ تمام رسولوں نے اللہ کی وحدانیت کی تبلیغ کی۔ نینوا کے لوگ راہ راست سے ہٹ گئے۔ وہ بتوں کی پوجا کرتے تھے۔ ان کا خیال تھا کہ بتوں کا ان کی زندگی پر اثر پڑے گا۔ ہمارے نبی یونس علیہ السلام تشریف لائے اور انہیں اللہ کی بندگی کرنے کی تلقین کی۔ تاہم یونس کی کوششیں رائیگاں گئیں۔ نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے انہیں ان کی ضد کے آخری نتائج سے خبردار کیا۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے ان سے فرمایا: اگر تم بتوں کی عبادت کرو گے تو اللہ تعالیٰ تمہیں عذاب دے گا۔ ہمارے نبی یونس نینوا والوں سے ناراض تھے۔ انہیں اللہ کے عذاب سے ڈرایا۔

حضرت یونس علیہ السلام کا شہر چھوڑ کر جانا:-

ہمارے نبی یونس نینوا کو چھوڑ کر چلے گئے۔ وہ بحیرہ روم کی طرف روانہ ہوا۔ اس کا خیال تھا کہ اللہ نینوا والوں کو عذاب دے گا۔ کئی دن گزر گئے۔ تاہم ہمارے نبی یونس نے نینوا کے لوگوں کی کوئی بات نہیں سنی۔ اس نے بہت سے مسافروں سے ان کے بارے میں پوچھا: “نینوا کے لوگ کیسے ہیں؟” “وہ اچھی زندگی گزار رہے ہیں،” مسافروں نے جواب دیا۔ ہمارے نبی یونس حیران رہ گئے۔ اللہ نے نینوا کے لوگوں کو عذاب نہیں دیا تھا۔ اس وجہ سے یونس نے بحیرہ روم کا سفر جاری رکھا۔ آئیے بڑے شہر نیناوا کی طرف لوٹتے ہیں۔ شہر میں کیا ہوا؟ اللہ نے نینوا والوں کو عذاب کیوں نہیں دیا؟ ہمارے نبی یونس نے جب نینوا چھوڑا تو غصے میں تھے۔

نینوا کے لوگوں پر عذاب کا خدشہ:-

کچھ دنوں کے بعد نینوا کے لوگوں نے خوف کے آثار دیکھے۔ آسمان کالے بادلوں سے بھرا ہوا تھا۔ آسمان پر دھوئیں کی طرح کچھ تھا۔ کچھ نیک لوگوں نے وہ نشان دیکھے۔ انہوں نے یہ نتیجہ اخذ کیا کہ اللہ نینوا کے لوگوں کو عذاب دے گا۔ اور ان سب کو تباہ کر دے گا۔ وہ سمجھ گئے کہ اللہ نینوا کو کھنڈرات میں بدل دے گا۔ اس کی وجہ سے صالحین نے نینوا کے لوگوں کو اللہ کے عذاب سے خبردار کیا۔ اُنہوں نے اُن سے کہا: ’’اپنے آپ پر رحم کرو۔ اپنے بیٹوں اور بیٹیوں پر رحم کرو۔ تم ضد کیوں کر رہے ہو؟ یونس کبھی جھوٹ نہیں بولتا تھا۔ اللہ تمہیں ضرور سزا دے گا۔‘‘ نینوا کے لوگوں نے اللہ کے عذاب کی نشانیاں دیکھ لیں۔ اس طرح وہ اپنے آخری نتیجے اور حتمی نتیجے۔ اور اپنے بیٹوں، بیٹیوں اور اپنے شہر کے حتمی نتیجے کے بارے میں سوچنے لگے۔ وہ سمجھ گئے کہ بت ان کے کام نہیں آئیں گے۔ وہ سمجھ گئے کہ بت محض پتھر ہیں۔ جو ان کے باپ دادا نے اپنے ہاتھوں سے بنائے تھے۔ اس طرح، انہوں نے ایک دوسرے سے پوچھا: “ہم بتوں کی پوجا کیوں کرتے ہیں؟ ہم اللہ کی بندگی کیوں نہیں کرتے؟

نینوا کے لوگوں کا توبہ کرنا:-

نینوا کے لوگ توبہ کرنا چاہتے تھے۔ وہ غافل تھے، پھر وہ دھیان کرنے لگے۔ وہ سو رہے تھے، اور پھر جاگ گئے۔ اس وجہ سے وہ ہمارے نبی یونس کو ڈھونڈنے لگے۔ انہوں نے اللہ پاک پر اپنے ایمان کا اعلان کیا۔ حالانکہ ہمارے نبی یونس نینوا کو چھوڑ کر کسی دور دراز جگہ چلے گئے تھے۔ کوئی نہیں جانتا تھا کہ وہ کہاں چلا گیا ہے۔ چنانچہ وہ ایک جگہ جمع ہوئے۔ نیک لوگوں میں سے ایک شخص آیا اور ان سے کہا: ’’نینوا کے لوگو، اللہ پر اپنے ایمان کا اعلان کرو۔ اللہ اپنے بندوں پر مہربان ہے۔ اسے دکھائیں کہ آپ نے توبہ کی ہے۔ دودھ پلانے والے بچوں کو لے لو اور انہیں رلاؤ۔ اپنے جانوروں کو چراگاہوں سے دور لے جائیں۔ انہیں بھوکا رکھو تاکہ وہ زور سے روئیں۔” نینوا کے لوگوں نے یہ کیا۔ انہوں نے اپنی ماؤں سے بچے لیے۔ بچے اور ان کی مائیں ایک دوسرے کے لیے روئیں۔ بھوک کی وجہ سے جانور رونے لگے۔ اس طرح نینوا شہر میں کوئی سرگرمی نہیں ہوئی۔ نینوا کے تمام لوگ اپنے گناہوں پر روئے اور پھر اللہ واحد پر ایمان لائے۔ چنانچہ کالے بادل آہستہ آہستہ بکھرتے گئے۔ اور پھر صاف نیلا آسمان نظر آنے لگا۔ سورج پھر چمکا۔ نینوا کے لوگ اللہ کی عظیم رحمت اور ایمان اور زندگی کی نعمت پر خوش ہوئے۔ نینوا کے لوگ اپنے نبی کی واپسی کے منتظر تھے۔ تاہم ان کا انتظار بے سود تھا۔ ہمارے نبی یونس کے چلے جانے پر غصہ آیا۔ وہ واپس نہیں آیا۔ وہ کہاں چلا گیا؟

سمندری سفر :-                    Hazrat younus ka waqia

سمندر میں ہمارے نبی یونس بحیرہ روم میں پہنچے۔ وہ بندرگاہ پر رک گیا۔ وہ کسی جزیرے پر جانے کے لیے بادبانی کشتی کا انتظار کر رہا تھا۔ ایک بادبانی کشتی آئی۔ کشتی مسافروں سے بھری ہوئی تھی۔ جب کشتی بندرگاہ پر رکی تو کچھ مسافر اترے اور کچھ سوار ہو گئے۔ سوار ہونے والوں میں ہمارے نبی یونس بھی تھے۔ ملاحوں نے بادبان اٹھائے اور کشتی نے سفر شروع کیا۔ جب کشتی سمندر کے بیچ میں تھی تو طوفان اڑا اور لہریں بلند ہوئیں۔ جب کشتی کھردرے پانی میں سے گزر رہی تھی تو ایک  وہیل نمودار ہوئی۔ وہیل لہروں کے درمیان اٹھی اور پھر اپنی دم سے پانی کو مارتی ہوئی گر گئی۔ اس نے ایک دھماکے کی طرح زوردار شور پیدا کیا۔ مچھلیاں خوفزدہ تھیں اس لیے وہ تیر کر بھاگ گئیں۔ وہیل تھوڑی دیر کے لیے رکی اور پھر اس کے منہ سے پانی فوارے کی طرح بہنے لگا۔ وہیل تیزی سے کشتی کی طرف بڑھی اور پھر تیزی سے مڑ گئی۔ اس نے ایک بڑی لہر بنانے کے لیے اپنی دم کو حرکت دی۔ لہر نے کشتی کو زور سے ہلا دیا۔ کشتی کے ملاح نے ایک دوسرے سے کہا: “وہیل کشتی کو غرق کر کے تباہ کرنا چاہتی ہے۔” وہیل بڑی تھی لیکن کشتی چھوٹی تھی۔ کشتی کے کپتان کے پاس ایک ہی حل تھا۔ مسافروں میں سے ایک کے ساتھ وہیل کو مطمئن کرنا پڑا۔ چنانچہ مسافر جمع ہوئے اور قرعہ ڈالا۔ قرعہ رسول اللہ یونس پر پڑا۔ یونس اپنی قسمت کا بہادری سے سامنا کرنے کے لیے آگے بڑھا۔ ہمارے نبی یونس جانتے تھے کہ جو کچھ ہوا وہ اللہ کی مرضی کے مطابق ہے۔ اس لیے وہ خوفزدہ نہیں ہوا اور جب اس نے اپنے آپ کو گہرے پانی میں پھینک دیا۔ مسافروں اور ملاحوں نے وہیل کو شکار کی طرف آتے دیکھا۔ اس کے بعد انہیں کچھ نظر نہیں آیا۔ یونس اور وہیل غائب ہو گئے۔ کشتی خطرے سے محفوظ رہی۔

مچھلی کا آپ کو نگلنا:-    Hazrat younus ka waqia

گہرے پانی میں کیا ہوا؟ وہیل کے پیٹ میں موجیں ہمارے نبی یونس کو نگل گئیں۔ جب یونس اپنے آپ کو خطرے سے بچانے کے لیے تیراکی کر رہا تھا تو اس نے دیکھا کہ وہیل اپنا بڑا، خوف زدہ منہ کھول کر اس کی طرف آتی ہے۔ لمحے گزر گئے۔ یونس وہیل کے منہ میں تھا، اور پھر وہ اس کے بڑے، سیاہ پیٹ میں تھا۔ انہی لمحات میں ہمارے نبی یونس نے سمجھ لیا کہ انہیں نینوا واپس جانا ہے، جزیرے پر نہیں جانا ہے۔

وہیل کے پیٹ میں، یونس نے کہا:      Hazrat younus ka waqia

Hazrat younus ki dua

“تیرے سوا کوئی معبود نہیں ہے۔ شان تیری ہے۔ یقیناً میں ان لوگوں میں سے تھا جنہوں نے اپنی جانوں پر ظلم کیا”۔ یونس نے یہ الفاظ اس لیے کہے کہ اس کا اللہ پر بھروسہ تھا، جو ہر چیز پر قادر ہے۔ ہمارے نبی یونس نے محسوس کیا کہ انہیں نینوا واپس جانا ہے، اور دور دراز جزیرے پر نہیں جانا ہے۔ اللہ پاک، زمین اور سمندر کا مالک ہے۔ وہ گہرے سمندروں میں وہیل مچھلیوں کا خالق ہے۔ اسی وجہ سے ہمارے نبی یونس کی ابتدا ہوئی۔ گھنٹے گزر گئے۔ یونس وہیل کے پیٹ میں تھا۔ مزید گھنٹے گزر گئے، لیکن وہیل گہرے پانی میں جا رہی تھی۔ ہمارے نبی یونس ابھی تک اللہ کی تسبیح کر رہے تھے اور کہہ رہے تھے: “تیرے سوا کوئی معبود نہیں۔ شان تیری ہے۔ یقیناً میں ان لوگوں میں سے تھا جنہوں نے اپنی جانوں پر ظلم کیا۔ اسی طرح دن رات گزرتے گئے۔

حضرت یونس علیہ السلام کا بچنا:-

  اللہ پاک نے چاہا کہ وہیل مچھلی کسی جزیرے کے ساحل پر جائے۔ جب وہیل ساحل کے قریب پہنچی تو اس کا پیٹ سکڑ گیا اور اس سے پانی نکل گیا۔ تو یونس لہروں پر تھا، اور پھر وہ ساحل کی ہموار ریت پر تھا۔ اللہ نے یونس پر رحم کیا۔ اس نے اسے بغیر پتھروں کے ساحل پر بسایا۔ اگر ساحل سمندر پر پتھر ہوتے تو پتھر یونس کی جلد کو پھاڑ دیتے۔ یونس اب بہت کمزور ہو چکا تھا۔ وہ پیاس سے مرنے والا تھا۔ یونس ہلنے سے قاصر تھا۔ اسے سائے میں مکمل آرام کی ضرورت تھی۔ جب وہ ریت پر اکیلا تھا تو اس نے کیا کیا؟ اللہ تعالیٰ نے لوکی کا پودا بنایا اور اس کا سایہ ہمارے نبی یونس کو بنایا۔ ہمارے نبی یونس لوکی کے پودے کے بڑے پتوں کے سائے میں بیٹھے تھے۔ اس دوران اس نے لوکی کھائی۔ یہ بات قابل ذکر ہے کہ لوکی میں جلد کی تعمیر نو اور جسم کو مضبوط بنانے کے لیے مفید مواد موجود ہوتا ہے۔ اس کے علاوہ مکھیاں لوکی کے پودوں کے قریب نہیں آتیں۔ اللہ تعالیٰ نے یونس کو وہیل کے پیٹ سے بچایا۔ تو ہمارے نبی یونس نے سمجھا کہ اللہ ہر چیز پر قادر ہے۔

حضرت یونس علیہ السلام کی واپسی:-

ہمارے نبی یونس دوبارہ تندرست ہو گئے اور اپنے شہر نینوا واپس چلے گئے۔ نینوا کے لوگوں نے ہمارے نبی یونس کا پرتپاک استقبال کیا۔ وہ سب اللہ پر ایمان لائے، اس لیے اللہ نے ان کو عذاب نہیں دیا۔ اس طرح بچے کھیلتے تھے۔ مرد اپنے کھیتوں میں کام کرتے تھے۔ جانور کھیتوں میں سکون سے چرتے تھے۔ یونس خوش ہوا جب وہ سمجھ گیا کہ اس کی قوم اللہ پر ایمان لے آئی ہے۔

قرآن کی آیات کی روشنی میں

اللہ کے نام سے جو بڑا مہربان نہایت رحم والا ہے۔

[139] اور یونس یقیناً رسولوں میں سے تھے۔

(140) جب وہ بھاگ کر بھری ہوئی کشتی کے پاس پہنچا۔

(141) پس اس نے (ان کے ساتھ) شریک کیا، لیکن ان لوگوں میں سے تھا جو نکالے گئے ہیں۔

(142) تو مچھلی نے اسے نگل لیا جبکہ اس نے وہ کام کیا جس کا اس نے اپنے آپ کو ملامت کیا۔

(143) لیکن اگر ایسا نہ ہوتا کہ وہ تسبیح کرنے والوں میں سے ہوتا۔

(144) وہ اس کے پیٹ میں اس دن تک رہے گا جب وہ اٹھائے جائیں گے۔

(145) پھر ہم نے اسے زمین کی خالی سطح پر اس حال میں ڈال دیا کہ وہ بیمار تھا۔

(146) اور ہم نے اس کے لیے ایک لوکی کا پودا اگایا۔

[147] اور ہم نے اسے ایک لاکھ کی طرف بھیجا بلکہ وہ حد سے بڑھ گئے۔

(148) اور وہ ایمان لے آئے تو ہم نے انہیں ایک وقت تک رزق دیا۔ قرآن، 37، 139-148۔

اللہ کے نام سے جو بڑا مہربان نہایت رحم والا ہے۔

[87] اور یونس جب غصے میں چلا گیا تو اس نے خیال کیا کہ ہم اسے تنگ نہیں کریں گے تو اس نے مصیبتوں کے درمیان پکارا کہ تیرے سوا کوئی معبود نہیں، تو پاک ہے۔ بے شک میں ان لوگوں میں سے ہوں جو اپنے آپ کو خسارے میں ڈالتے ہیں۔

(88) تو ہم نے اس کی دعا قبول کی اور اسے غم سے نجات دی اور اسی طرح ہم مومنوں کو نجات دیتے ہیں۔ قرآن، 21، 87-88

Hazrat younus ka waqia

Hazrat younus ka waqia

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Check Also
Close
Back to top button